روایت بالمعنی کی حقیقت اور اسکا پس منظر

مستشرقین، ملحدین اور خود مسلمانوں میں سے جدید تہذیب سے متاثر معدودے چند حضرات حدیثِ نبوی کویہ کہہ کر بھی شک کے دائرہ میں لانے کی کوشش کی ہے کہ راویانِ حدیث نے احادیثِ نبویہ کواپنے الفاظ میں بیان کیا؛ پھربعد والوں نے اسی طرح اپنے الفاظ میں اس طرح نقل درنقل ہوتے ہوئے الفاظِ نبوی بالکل قائم نہ رہ سکے، الفاظِ نبوی اور موجودہ ذخیرہ حدیث میں تفاوت عظیم ہوتا گیا جس کی وجہ سے اس موجودہ ذخیرہ حدیث پراعتماد واعتبار نہیں کیا جاسکتا۔ اسطرح ملحد ذہنوں نے حدیثِ نبوی کے حوالے سے شکوک وشبہات پیدا کرکے مسلمانوں کوان کی عظیم تاریخ سے محروم کرنے کی کوشش کی ہے۔ حقیقت یہ ہے کہ حدیث کے حوالے سے اس طرح کی بات وہی کہہ سکتا ہے جسے حدیث کی جمع وتدوین اور اس میں حددرجہ احتیاط اور روایت بالمعنی کے شرائط اور ان کے جواز کے دلائل سے لاعلمی ہو۔

روایت بالمعنی اور ذخیرہ حدیث :
بلاشبہ بعض احادیث روایت بالمعنی کے طور پر ہیں جہاں کوئی راوی ’’أو کما قال‘‘ یا صرف حرف ’’أو‘‘ سے، ’مثلہ‘ یا ’نحوہ‘ یا ’بالمعنی‘ یا ’والمعنی واحد‘ و غیرہ کے الفاظ استعمال کرتا ہو۔ باقی ان کے علاوہ تمام احادیث کے الفاظ بھی وہی ہیں جو آں حضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمائے ہیں۔ خبر متواتر میں قطعیت کے ساتھ اور خبر واحد میں ظنیت کے ساتھ یہ کہنا بجا ہے کہ یہ آپ ہی کے الفاظ ہیں اور بلاکسی قوی عقلی اور نقلی دلیل کے ہر حدیث کے مروی بالمعنی ہونے کا دعویٰ مطلقاً مردود ہے۔
آنحضور صلی اللہ علیہ وسلم کے اِرشادات کا بہت بڑا حصہ بعینہ الفاظِ نبوی کے ساتھ منقول ہے۔ مثلا ً اذان و اقامت کے کلمات، اذکار و ادعیہ کے الفاظ اور احادیث ِقدسیہ۔ان کے علاوہ اَحکام و اخلاق کے متعلق احادیث کا وہ تہائی حصہ فعلی اور تقریری روایات پرمشتمل ہے(تقریر کے معنی ہیں کہ آپ کے سامنے کوئی کام کیا گیا ہو اور اس پر آپ نے انکار نہ فرمایا ہو)۔فعلی اور تقریری احادیث کے لئے اصل الفاظ تو موجود ہی نہیں ہوتے جن کی پابندی کی شرط لگائی جائے۔روایت بالمعنی کا اگر سوال پیدا ہوسکتا ہے تو وہ صرف قولی اَحادیث کے بارے میں۔ پورے ذخیرہٴ روایات پر غورکرنے سے اندازہ ہوسکتا ہے کہ جن احادیث میں روایت بالمعنی کا احتمال ممکن ہے، وہ ایک ثلث سے زیادہ نہیں ہیں۔ اس لیے یہ دعویٰ کرنا کہ تمام احادیث روایت بالمعنی ہیں، خالص افترا اور سفید جھوٹ ہے۔

روایت بالمعنی کا جواز ،شرائط اور احتیاط:
یہاں یہ بات پیشِ نظررہے کہ جمہورِ علماء نے روایت بالمعنی کی اجازت دی ہے لیکن اس کے لیے کچھ شرائط کوملحوظ رکھنا ضروری قرار دیا ہے ، جب راوی ان شرائط کا حامل نہ ہو تواس کے لیے روایت بالمعنی جائز نہیں۔ روایت بالمعنی کو جائز قرار دیا گیاہے تو اس کے لئے محدثین نے بڑی شرطیں لگائی ہیں، یعنی یہ طریق کار وہی لوگ اختیار کرسکتے ہیں جو زبان کے ماہر اور لغت کی وسعتوں پرپوری طرح قابو پاسکتے ہوں۔

(۱)راوی عربی زبان کے اسرار ورموز سے بخوبی واقف ہو۔
(۲)شریعت کے غایات ومقاصدکوجانتا ہو۔
(۳)جس حدیث کی روایت بالمعنی کرنا چاہتا ہے وہ جوامع الکلم کے قبیل سے نہ ہو۔
(۴)وہ حدیث ایسی نہ ہو کہ اس کے الفاظ عبادت شمار ہوتے ہوں جیسے ادعیہ ماثورہ پرمشتمل احادیث۔
ٍراوی جس حدیث کی روایت بالمعنی کا خواہاں ہے، اس کے الفاظ اسے یاد نہ ہوں۔
(الالماع،باب تحری الروایۃ والمجئی:۱۷۸، دارالتراث، المکتبۃ العتیقۃ، القاھرۃ، الطبعۃ الاولی)
حافظ ابن حجر لکھتے ہیں : »
یعنی “متن حدیث کے اَلفاظ میں عمدا ً تبدیلی کرنا یا اختصار کرنا جائز نہیں ہے اور نہ ایک ہم معنی لفظ کو دوسرے ہم معنی لفظ سے بدلنا جائز ہے۔ ہاں یہ کام اسی کے لئے جائز ہوسکتا ہے جو الفاظ کے معانی و مطالب سے بخوبی واقف اور باخبر ہو۔” (شرح نخبة الفکر)تفصیل کیلئے ملاحظہ ہو شرح مسلم مقدمہ امام نووی / فتح المغیث شرح الحدیث العراقی، صفحہ ۵۷۶
معلوم ہوا کہ اس روایت بالمعنی سے حدیث کی حیثیت کم نہیں ہو ئی چونکہ اس طرح سے راوی حدیث کے معنی روایت کرتا ہے اور حدیث کے مدلول ومقصود میں کچھ خلل واقع نہیں ہوتا۔ اگر اہل علم اورماہرین لغت کے لئے بھی روایت بالمعنی کی اجازت نہ ہو تو ایک زبان سے دوسری زبان میں ترجمہ بھی حرام قرار پاتاہے اور ترجمانی بھی ناجائز ٹھہرتی ہے۔ حالانکہ اس بار ے میں اہل علم کے درمیان کوئی اختلاف نہیں ہے۔ صحابہ کرام نے متعدد مواقع پر غیر عربی لوگوں سے ترجمانی کے واسطے سے گفتگو کی ہے اوراسلام کا پیغام پہنچایا ہے۔
اس سلسلے میں اصل بات یہی ہے کہ جوالفاظ نبی کریمﷺ سے سنے جائیں ان کودوسروں تک پہنچادیا جائے۔ جب الفاظ یاد نہ ہوں تو سہولت کے طور پرروایت بالمعنی کی اجازت ہے۔ احادیثِ نبویہ کے کتابوں کی تدوین کے بعد اس سہولت کی یہ ضرورت باقی نہیں رہی لہٰذا اب احادیث کا اخذ وتحمل اورا ن کی نقل وروایت انہی الفاظ میں ضروری ٹھہری جوحضوراکرمﷺ سے سنے گئے ہوں۔ کتب حدیث کی تدوین کے بعد روایت بالمعنی کی اجازت نہیں دی جاسکتی، اس بات کوامام ابوعمروعثمان بن عبدالرحمن المعروف ابنِ صلاح (۶۴۲ھ) نے اپنے مقدمہ میں روایت بالمعنی کے بارے میں علماء کے اختلاف کوذکر کرنے کے بعد لکھا ہے:
ترجمہ:یہ اختلاف ان احادیث کے بارے میں باقی نہیں جوکتبِ حدیث میں جمع کرلی گئی ہیں، اب کسی شخص کویہ حق نہیں پہونچتا کہ ان کتب میں محفوظ احادیث کے الفاظ کوتبدیل کرکے ان کی جگہ دوسرے اہم الفاظ رکھ دے، جن لوگوں نے روایت بالمعنی کی اجازت دی تھی، جب الفاظ کے ضبط کرنے اور ان پراصرار کرنے میں تکلیف کاسامنا تھا اور کتب حدیث میں جواحادیث موجود ہیں ان کے بارے میں یہ دقت نہیں پائی جاتی؛ اگرکسی کے لفظ کوتبدیل کرنے کی اجازت ہو بھی تودوسرے کی تصنیف میں تصرف کا حق نہ ہوگا۔ (تدریب الراوی:۲/۱۰۳، مکتبۃ الریاض الحدیثیۃ ، الریاض)

روایت بالمعنی کے حوالے سے صحابہ کی احتیاط:
اصحابِ رسول روایت بالمعنی پر اسی وقت اقدام کرتے جب کہ الفاظِ رسول یاد نہ ہوں؛ اگرانھیں روایت بالمعنی کی شدید ضرورت ہوتی یاحضور کے الفاظ میں شک گذرتا توان کے احتیاط کا یہ حال تھا کہ حدیث کے خاتمہ پرایسے الفاظ فرماتے جن سے حزم واحتیاط کا اظہار ہوتا؛ حالانکہ وہ حضوراکرم کا معنی ومفہوم سب سے بہتر جانتے تھے، اس لیے کہ وہ جانتے تھے کہ روایت بالمعنی خطرہ سے خالی نہیں۔ جن کا روایت بالمعنی کے حوالے سے اس قدر حزم واحتیاط ہوتا تھا، الفاظِ رسول کے بالکل بدل جانے کی بات کیسے کہی جاسکتی ہے، حضرت عبداللہ بن مسعودؓ نے ایک روز یہ الفاظ کہے کہ نبی کریمﷺ نے فرمایا: یہ کہہ کرآپ کی آنکھیں بھرآئیں اور گردن کی رگیں پھول گئیں؛ پھرکہنے لگے:ترجمہ:یعنی آپ نے اسی قسم کے الفاظ اور اس سے ملتے جلتے الفاظ ارشاد فرمائے۔ (سنن الدارمی، كتاب المقدمة،باب مَنْ هَابَ الْفُتْيَا مَخَافَةَ السَّقَطِ، حدیث نمبر:۶۷۲، شاملہ، موقع وزارة الأوقاف المصرية)
حضرت ابوالدرداء کی عادت تھی کہ جب حدیث بیان کرتے توکہتے:ترجمہ:آپ نے یوں فرمایا یاس اس کے مانند۔ (تدریب الراوی، صفۃ روایت الحدیث:۲/۱۰۳)
حضرت انس بن مالکؓ جب حدیث بیان کرکے فارغ ہوتے تو کہتے:أوکما قال رسول اللہﷺ ۔ (ابن ماجہ، باب التوفی فی الحدیث، حدیث نمبر:۲۴)
روایتِ حدیث کرتے وقت صحابہؓ وتابعین کا یہ حال تھا کہ وہ روایت بالمعنی کی اجازت اس وقت دیتے تھے جب راوی حدیث کے الفاظ بھول گئے ہوں اور وہ حدیث جوامع الکلم اور دعائیہ کلمات پر مشتمل نہ ہو؛ پھرحدیث کے آخر میں ایسے الفاظ کہتے جوحزم واحتیاط کے آئینہ دار ہوتے اور اگرحدیث کے الفاظ میں غلطی ہوتی یاشک گذرا ہو تواسی وقت بیان کردیتے اس کی نظیر کوئی قوم کسی زمانہ میں پیش نہیں کرسکتی، یقین نہ آئے توصحیحین اور دیگر کتبِ حدیث پرایک نگاہ ڈال کردیکھ لیجئے، آپ کوراویانِ حدیث کے حفظ وضبط، امانت ودیانت اور حقیقتِ حال کا پتہ چل جائے گا، صحابہ کرام اکثر وبیشتر نبی کریمﷺ کے الفاظ ہی روایت کرتے تھے جووہ آپ سے سنتے، وہ اس بات کے حددرجہ حریص تھے، اس لیے کہ حضوراکرمﷺ فصیح العرب تھے اور آپ کی احادیث دینِ اسلام کا لازمی اور اہم جزہیں۔
مندرجہ ذیل امور اس بارے میں ان کا ساتھ دیتے تھے:
(الف)صحابہ کرامؓ بلا کا حافظہ رکھتے تھے، وہ نہایت ذہین وفطین تھے، صرف ا یک دودفعہ سن کربڑے لمبے لمبے قصیدے اور خطبے انہیں یاد ہوجایا کرتے تھے اور پھرتازندگی نہ بھولتے، اس کی وجہ یہ تھی کہ وہ ایک ناخواندہ قوم کے ساتھ تعلق رکھتے تھے ان کے سینے ان کے دفتر اور ان کے حافظے ان کی کتابیں تھیں، کثرتِ مشق سے ان کی قوتِ حافظہ بہت تیز ہوگئی تھی، سخت غلطی ہوگی کہ صحابہ کا موازنہ دیگراقوام یاعصرِحاضر کے لوگوں کے ساتھ کیا جائے۔
(ب)اکثرراویانِ حدیث نے احادیثِ نبویہ کولکھ کرمحفوظ کرایا تھا؛ تاکہ کہیں ایسا نہ ہو کہ سہو وخطا یاپیرانہ سالی کی وجہ سے ضائع ہوجائیں، تابعین میں صحابہ کی نسبت کتابتِ حدیث کا زیادہ رواج تھا، اس طرح سینوں میں محفوظ رکھنے کے ساتھ کتابت حدیثِ احادیثِ نبویہ کے عوامل تحفظ میں سے ایک زبردست عامل کی حیثیت رکھتے تھے۔
(ج)جومجالس احادیث کے اخذ وتحمل اور نقل وروایت کے لیے منعقد کی جاتی تھیں اور مختلف بلادوامصار کے جوسفر طلب حدیث کے سلسلہ میں اختیار کیے جاتے تھے، تحفظ حدیث کے سلسلہ میں بڑے کارآمد ثابت ہوئے۔
مندرجہ بالا وجوہ واسباب کی روشنی میں ہم بڑے وثوق واطمینان سے کہہ سکتے ہیں کہ روایت بالمعنی کی اجازت اس وقت تھی، جب عربی زبان میں فساد وبگاڑ پیدا نہیں ہوا تھا، لغت وشرع کے ائمہ کبار کی مجبوری کی صورت میں اس کی اجازت دیا کرتے تھے، مزید برآں صحابہ کواحادیث کے الفاظ میں نسیان کا جوعارضہ پیش آتا تھا وہ معمولی لفظ میں ہوا کرتا تھا، مثلاً یہ کہ کوئی حرف عطف یامفرد لفظ بھول جائے یاکوئی جملہ یاد نہ رہے۔

روایت بالمعنی – قرآن وحدیث کی روشنی میں:

تمام احادیث کوقرآن کی طرح الفاظ کے اہتمام کے ساتھ روایت نہیں کیا گیا اور اس کوبالمعنی روایت کرنے کی اجازت بھی دی گئی اسکی وجہ یہ ہے کہ قرآن کلام اللہ ہے اور حدیث کلام رسول ﷺ۔ کلام اللہ کی تلاوت عبادت ہے اور قرآن اپنے نظم وترتیب اور الفاظ کے اعتبار سے بھی معجزہ ہے اس لیے منجانب اللہ اس کے الفاظ کوقائم رکھنے کا انتظام کیا گیا اور کتابت کے ذریعے اس کے الفاظ ہی محفوظ نہیں کئے گئے بلکہ اس میں کسی بھی طرح کی کمی وبیشی کوگوارہ نہیں کیا گیا کیونکہ اس سے اس کی معجزانہ حیثیت پرفرق آتا اور خود اس کا ایک ایک حرف مقصود تھا کہ اس کی تلاوت بھی عبادت ٹھہری۔پھریہاں یہ امر بھی پیشِ نظر رہے کہ الفاظِ قرآنی کی حفاظت خود شریعتِ اسلامیہ کی حفاظت ہے اور حدیث بالمعنی میں امت کے لیے یسروسہولت ہے، جس سے اس کا دوسروں تک پہونچانا آسان ہوجاتا ہے؛ اگرقرآن کی طرح حدیث نبوی کے لیے بھی یہ لازمی شرط قرار دی جاتی کہ اس کودوسروں تک انہیں الفاظ میں پہونچایا جاسکتا ہے جورسول اللہﷺ سے سنے گئے توامت کومشکلات سے دوچار ہونا پڑتا۔

روایت بالمعنی کی اجازت حدیث کی روشنی میں
صحابہ وتابعین اس بات کے حریص تھے کہ حدیثِ نبوی کوحضوراکرمﷺ کےبیان فرمودہ الفاظ ہی میں ادا کیا جائے، اس میں شک نہیں کہ روایت بالمعنی کارواج عصرصحابہ وتابعین یعنی پہلی صدی ہجری میں تدوینِ حدیث سے پہلے تھا؛ مزید برآں روایت بالمعنی کے بارے میں سب راویانِ حدیث متفق بھی نہیں تھے؛ چنانچہ بعض راویوں کی حالت یہ تھی کہ جب حدیث کے الفاظ کوبھول جاتے توبنابراحتیاط روایتِ حدیث سے ہچکچاتے تھے کہ مبادا وہ حضورﷺ کا مفہوم ادا نہ کرسکیں، ان کا خیال ہوتا تھا کہ چونکہ ان سے بڑھ کرحافظ وضابط راوی موجود ہیں، اس لیے حدیث کوبیان نہ کرنے کی وجہ سے وہ کتمانِ علم کے مرتکب نہیں ہوں گے اور بعض راویوں کا یہ طرزِ عمل تھا کہ جب حدیث کے الفاظ یاان کا کچھ حصہ بھول جاتے تووہ اس کا معنی ومطلب دوسروں تک پہنچادیتے تاکہ وہ علم کے چھپانے والے نہ قرار پائیں۔
(۱)ایک صحابی سلمان بن اکیمہ اللیثی نے ایک دفعہ نبی کریمﷺ کی خدمت میں عرض کیا یارسول اللہ! بسااوقات میں آپ سے ایک حدیث سنتا ہوں اور اسے پوری طرح ادا نہیں کرسکتا، ایک آدھ لفظ کی کمی بیشی ہوجاتی ہے، اس بارے میں کیا ارشاد ہے؟ فرمایا: جب تم کسی حرام چیز کوحلال اور حلال کوحرام قرار دینے والے نہ بنو توروایت بالمعنی میں کوئی مضائقہ نہیں اذالم تحلوا حراماً ولاتحرموا حلالاً فلابأس(کنزالعمال، الاکمال من روایۃ الحدیث:۵/۲۹۲) حسن بصری سے اس روایت کا ذکر کیا گیا توفرمایا: لولاھذاماحدثنا اگریہ حدیث نہ ہوتی توہم حدیث روایت ہی نہ کرتے۔
(2)عبداللہ بن مسعود روایت کرتے ہیں کہ ایک شخص نے نبی کریمﷺ سے یہ سوال کیا کہ اے اللہ کے رسول! آپ ہم سے احادیث بیان کرتے ہیں، ہم اسے آپ سے جس طرح سنتے ہیں اس طرح ادا نہیں کرپاتے توآپﷺ نے فرمایا، تم میں کا کوئی اس کے معنی اور مفہوم کوپالے تواسے بیان کرے إنك لتحدثنا حديثا لانقدر أن نسوقه كمانسمعه، فقال:إذاأصاب أحدكم المعنى فليحدث۔ (الکفایۃ فی علم الروایۃ، باب ذکرالحجۃ فی اجازہ روایۃ:۱/۲۰۰، المکتبۃ العلمیۃ، المدینۃ المنورۃ)
جمہور علمائے سلف کا زاویہ نگاہ یہ ہے کہ جب حدیث کے الفاظ بھول جائیں توروایت بالمعنی جائز ہے، عہدِسلف میں اسی پرعمل تھا؛ اسی سے علامہ ماوردی نے یہ بات اخذ کی ہے کہ روایت بالمعنی کے جواز کے لیے حدیث کے اصلی الفاظ کا بھول جانا شرط ہے، ماوردی فرماتے ہیں:ترجمہ:اگرراوی حدیث کے الفاظ بھول گیا توروایت بالمعنی کرسکتا ہے اس لیے کہ اس نے نبی کریمﷺ سے دوچیزیں اخذ کی تھی، ایک لفظ اور دوسرے معنی، جب وہ ایک یعنی الفاظ کی ادائیگی سے قاصر ہے تودوسرے یعنی معنی کا ادا کرنا واجب ہے؛ خصوصاً اس لیے کہ بعض اوقات اس کے ادا نہ کرنے سے ایک شرعی حکم کوچھپانا لازم آتا ہے؛ اگرنبی کریمﷺ کے الفاظ راوی کوبھولے نہ ہوں تووہ دوسرے الفاظ میں آپ کے مفہوم کوبیان نہیں کرسکتا اس لیے کہ سرکارِدوعالمﷺ کے الفاظ میں جووضاحت پائی جاتی ہے وہ دوسرے کے الفاظ میں نہیں۔
(تدریب الراوی، صفۃ روایۃ الحدیث:۲/۱۰۱)

روایت بالمعنی کے لائقِ قبول ہونے میں قرآنی موقف
تاریخ مذاہب کا مشہور واقعہ ہے کہ جب حضرت آدم وحواء علیہما السلام نے شجرِممنوعہ کا پھل چکھا تواللہ تعالیٰ نے انہیں حکم دیا تھا کہ دونوں نیچے اترجاؤ، یہ واقعہ قرآنِ کریم میں اس طرح منقول ہے:
(۱)قَالَ اهْبِطَا مِنْهَا جَمِيعًا بَعْضُكُمْ لِبَعْضٍ عَدُوٌّ فَإِمَّا يَأْتِيَنَّكُمْ مِنِّي هُدًى فَمَنِ اتَّبَعَ هُدَايَ فَلَا يَضِلُّ وَلَايَشْقَى۔ (طٰہٰ:۱۲۳)
ترجمہ:خدا نے کہا: تم دونوں اکٹھے اس سے نیچے اتروکہ ایک کادشمن ایک ہوگا؛ پھراگرتمہارے پاس میری طرف سے ہوئی ہدایت پہونچے توجواس کا اتباع کرے گا تووہ نہ دنیامیں گمراہ ہوگا اور نہ آخرت میں شقی ہوگا۔
(۲)قَالَ اهْبِطُوا بَعْضُكُمْ لِبَعْضٍ عَدُوٌّ وَلَكُمْ فِي الْأَرْضِ مُسْتَقَرٌّ وَمَتَاعٌ إِلَى حِينٍ۔(الأعراف:۲۴)
ترجمہ:ہم نے کہا تم سب نیچے اترجاؤ، ایک دوسرے کے تم دشمن ہوگئے اور تمہارے لیے زمین ٹھکانہ ہے اور رہنا ہے ایک وقت تک۔
(۳)قُلْنَا اهْبِطُوا مِنْهَا جَمِيعًا فَإِمَّايَأْتِيَنَّكُمْ مِنِّي هُدًى فَمَنْ تَبِعَ هُدَايَ فَلَاخَوْفٌ عَلَيْهِمْ وَلَاهُمْ يَحْزَنُونَ۔ (البقرۃ:۳۸)
ترجمہ:ہم نے کہا:اترجاؤ جنت سے سب کے سب؛ سوپھراگر تمہارے پاس میرے طرف سے پیغامِ ہدایت لے کر، توجس نے میری پیروی کی ان پرکوئی خوف نہ ہوگا نہ وہ غمگین ہوں گے۔
یہ ایک ہی واقعہ کی تین مختلف تعبیریں ہیں، اللہ رب العزت نے جب یہ بات کہی ہوگی توظاہر ہے کہ ایک بات کہی ہوگی اور باقی تعبیرات میں اس کی روایت بالمعنی ہوں گی؛ اگرروایت بالمعنی جائز نہ ہوتی توقرآن کریم ایک بات کومختلف تعبیرات سے پیش نہ کرتا، اللہ رب العزت نے جب فرشتوں کوحکم دیا تھا کہ آدم کوسجدہ کرو تویاتوکہا ہوگا اسْجُدُوا لِآدَمَ (البقرۃ:۳۴) یا کہا ہوگا فَقَعُوا لَهُ سَاجِدِينَ (ص:۷۲)۔ظاہرہے کہ ان دومیں ایک تعبیر روایت بالمعنی ہوگی، علامہ آلوسی نے بھی ان آیات سے روایت بالمعنی کا اشارہ کیا ہے۔

آخری سوال :کیا الفاظِ حدیث میں اختلاف کی وجہ روایت بالمعنی ہے؟
احادیث کے الفاظ میں جوفرق واختلاف ہوتا ہے اس کی وجہ صرف روایت بالمعنی ہی نہیں بلکہ اس کے اور وجوہ بھی ہوتے ہیں، یہ سخت غلطی ہے کہ ایک ہی مفہوم ادا کرنے والی مختلف احادیث کے اختلاف الفاظ کوروایت بالمعنی پرمحمول کیا جائے اس کی اصل وجہ یہ ہےکہ حضوراکرمﷺ کی مجالس زمان ومکان اور احوال وواقعات کے اعتبار سے مختلف ہوا کرتی تھیں، اسی طرح آپ کے سامعین بھی ایک طرح کے نہیں ہوا کرتے تھے، کوئی فتویٰ پوچھنے آتا، کوئی جھگڑا چکانے آتا، کوئی وفد کی صورت میں حاضر خدمت ہوتا، ان مجالس میں حضور کے الفاظِ گرامی بلحاظِ اختصار وطوالت وضوح وخفاء وتقدیم وتاخیر وحسب موقع ومقام مختلف ہوا کرتے تھے، مثلاً:
آپ سےافضل الاعمال کے بارے میں دریافت کیا گیا توحضور نے ہرسائل کو جداگانہ جواب سے نوازا؛ اسی طرح جب آپﷺ سے افضل الجہاد یاافضل الصدقہ یا البرّووالاثم کےمعنی ومفہوم کے متعلق دریافت کیا گیا توآپ نے ہرسائل کوجوجواب دیاوہ دوسرے سے مختلف تھا، ایک ناواقف شخص خیال کرسکتا ہے کہ یہ ایک قسم کا تعارض ہے،حالانکہ سرورِکائنات روحانی طبیب تھے، وہ ہرشخص کواس کے حسب حال جواب دیتے تھے، یہ جواب یاتواس کے لیے مفید ہوتا تھا، یاجملہ حالات میں سب لوگوں کے لیے سود مند ہوتا تھا، یاصرف اس حالت سے ہم آہنگ ہوتا جس میں وہ سوال دریافت کیا گیا تھا۔
اس کی مثال یہ ہے کہ اذان واقامت وتشہد نیزنماز اور بعد نماز پڑھے جانے والے اذکار وادعیہ کے الفاظ مختلف ہیں؛ حالانکہ سب احادیث کے راوی عادل وضابط ہیں، فن حدیث سے بیگانہ شخص یہ خیال کرے گا کہ ان میں تناقص پایا جاتا ہے یایہ کہ ان کے راوی حفظ وضبط سے عاری ہیں یااس کی وجہ روایت بالمعنی ہے؛ حالانکہ دراصل یہ سب نبی کریمﷺ کے اپنے الفاظ ہیں؛ گویا آپ نے ارشاد فرمایا ہے کہ یہ سب الفاظ جائز اور درست ہیں اور ان کے ذریعہ امت کووسعت وسہولت دینا پیشِ نظر ہے۔
سرورِکائنات نے مدینہ وارد ہونے والے وفود کوجن تعلیمات وارشادات سے نوازا اسی طرح حضور نے جن صحابہ کوداعی ومبلغ بناکر اطرافِ مدینہ میں بھیجا اور جوقیمتی مشورے ان کومرحمت فرمائے، مزید آپ مختلف بلادوامصار کے ملوک وسلاطین کوجوگرامی نامے ارسال کئے جوزریں نصائح سے بھرپور تھے، ان سب کے الفاظ مختلف ہیں اور ان سب میں حسب موقع ومقام لوگوں سے ان کی عقل وفہم کے مطابق خطاب کیا گیا ہے، حضوراکرمﷺ جمعہ، عیدین، غزوات اور دیگراہم مواقع پرخطبہ ارشاد فرمایا کرتے تھے، ان خطبات میں آپﷺ اسلامی احکام پرروشنی ڈالتے، دینِ اسلام کے قواعد وضوابط جنت وجہنم کے حالات اور علاماتِ قیامت وعذاب قبر کا ذکر فرماتے، ان امور کا ذکر وبیان کرتے وقت موقع ومحل کی مناسبت سے آپ کے الفاظ کم وبیش اور مختلف ہوا کرتے تھے، ایسے ہی آپ امم سابقہ کے احوال واخبار پرروشنی ڈالتے، ایسا کرتے وقت آپ کا طرز وانداز مختلف ہوتا تھا اور آپ سامعین کے حالات کوپیشِ نظر رکھتے تھے؛ چنانچہ آپ کا ارشاد کبھی مفصل ہوتا اور گاہے مختصر، کبھی کھل کر بات کرتے اور گاہے مجمل ومبہم طور پر۔
دورجانے کی ضرورت نہیں، قرآن عزیز ہمارے سامنے ہے، جس میں باطل کا گزرتک کسی طرح ممکن نہیں قرآن عزیز میں ایک ہی نبی کا واقعہ مختلف سورتوں میں جداگانہ اور متنوع طریقوں سے مذکور ہے، بعض جگہ پورا واقعہ مختصراً یامفصلاً مذکور ہے، ایسا بھی ہوا ہے کہ اس واقعہ کا ایک حصہ ایک سورت میں مذکورہے اور دوسرا جز دوسری سورت میں؛ پھرایک حصہ مختصراً مذکور اور دوسرا تفصیلی، کیا ہرواقعہ کے ذکر وبیان میں جو اختلاف ہے اس کوتناقض پرمحمول کیا جائے گا؟ یا یہ کہ اس میں تناقض کی کوئی بات نہیں؛ بلکہ یہ مبنی برحق وصداقت ہے، واقعہ کا ایک جز جوایک جگہ مذکور ہے، اگراس کے اطراف کودوسری جگہ مذکور حصہ کے ساتھ ملادیا جائے تودونوں کے اجزاء مل جل کرپورے واقعہ کی تصویر سامنے آجاتی ہے۔

 

فیس بک تبصرے

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *