زنا بالجبر-حدود کی شرائط کی عدم موجودگی اور سزا

3

سیکولرز طبقہ کی طرف سے زنا بالجبر وغیرہ کی شرعی سزا کے خلاف بہت سے اعتراضات پڑھنے سننے کو ملتے رہتے ہیں ،
حال ہی میں اسلامی نظریاتی کونسل کے طرف سے جب یہ فیصلہ سنایا گیا کے ڈی این اے کا ثبوت زنا کی سزا کے لئے صرف ثانوی شہادت کے طور پر ہی قبول کیا جاسکتا ہے’ملاؤوں کےخوب لتے لئے گئے۔ اسلام کو سائنس مخالف قرار دیا گیا اور سائنس کی واجبی معلومات رکھنے والے بھی تھوڑی دیر کےلیے سائنس گردی پر آمادہ ہوگئے۔یہ بھی کہا گیا کہ زنا کی سزا کے لئے چار گواہ ہونا ضروری ہے اور ظاہر بات کہ زنا یاریپ کرنے والا خواہ مخواہ چار گواہوں اور وہ بھی ثقہ گواہوں کے سامنے عورت کی آبرو ریزی نہیں کرے گا۔اب اسلامی نظریاتی کونسل نے واحد گواہی ڈی این اے کو بھی قبول کرنے سے انکار کردیا ہے۔!!!
اس تحریر میں ایسے تمام شبہات پر بات ہوگی۔ پہلے چند ضروری پوائنٹ سمجھ لیں اس سے مسئلے کو سمجھنے میں آسانی ہوگی۔
زنا اور ریپ:
اسلام اور موجودہ مغربی نظام کے بنیادی تصورات میں اتنا فرق ہے کہ بعض دفعہ اسلام کے پیش کردہ ان بہترین اصولوں کو جسے ہر ذی شعور تسلیم کرے گا مغرب کے نکتۂ نظر سے پیش کیا جاتا ہے تو اس میں بہت بڑی زیادتی نظر آتی ہے۔
مغربی اصول ہم دیکھیں تو انکے مطابق زنا اگر باہمی رضامندی سے ہو تو ایک جائز عمل ہےجبکہ ریب انتہائی گھناؤنا جرم سمجھا جاتا ہے۔ یہاں واضح ہو کہ ریپ کے واقع ہونے کے لئے ضروری نہیں ہے کہ وہ زنا ہو بلکہ صرف “بالجبر” ہونا کافی ہوتا ہے ۔ یعنی اگر میاں بیوی کے درمیان تعلقات میں بھی اگر جبر ہو تو وہ بھی اسی سطح کا گھناؤنا جرم سمجھا جائے گا جسے ریپ کہتے ہیں.مغرب کی تصور آزادی میں عورت کو آزادی ہوتی ہے کہ وہ مرد کو جتنا چاہئے جنسی اُکساوے فراہم کرے لیکن ایک خاص حدود پار کرنے کے بعد مرد ریپ کا قصور وار ٹہرا دیا جاتا ہے۔بلکہ مغربی معاشرے میں ایسی صورت حال بکثرت فراہم کی جاتی ہے کہ عورت جب چاہےکسی کو جنسی اکساوے فراہم کرے اور پھر اس پر آسانی کے ساتھ “ریپ” کا الزام دھر دے۔ اس ریپ کا ثابت ہونا اور نہ ہونابعد کی چیز ہوتی ہے۔ لیکن جب تک عدالتی فیصلہ نہ آجائے ریپ کے الزام کی وجہ سے اسے جو بھی بھگتنا ہے وہ بھگت سکتا ہے۔ عورت کواس کی کھلی آزادی ہے کہ وہ جب چاہے الزام لگادے۔
اسکے بالمقابل اسلام زنا کو ہی بہت بڑا گناہ قرار دیتا ہے، اتنا بڑا کہ چار گواہوں کے میسر آنے کی صورت میں ایسی سخت سزا تجویز کرتا ہے کہ جس کے تصور سے ہی رونگٹے کھڑے ہوجائیں۔سزا چونکہ بہت سخت ہے اس لیے اس معاملے میں تحقیق کا معیار بھی بہت سخت رکھا گیا ہے ۔ یہاں عورت کا صرف یہ کہہ دینا کافی نہیں کہ فلاں نےا سکے ساتھ زنا کیا ہے۔
اگر اس مرحلہ پر کسی عورت کا اکیلا بیان ہی مرد کو زانی ثابت کرنے کے لئے کافی ہو تو اس کا نتیجہ یہ نکلے گا کہ زنا کے تمام جرائم کا فیصلہ ہر وقت عورت کے ہاتھ میں رہے گا۔ اس بنا پر عورت کا زنا کے الزام میں سزا پانا بھی ناممکن ہوجائے گا باوجود اس کے کہ اس نے رضامندی سے بدکاری کا ارتکاب کیا ہو۔ عورت جب چاہے گی تو اس کو زنا بالجبر قرار دے کراپنے آپ کو تو بری کرا لے گی لیکن مرد کو زنا کی سنگین سزا سے دوچار کردے گی۔ زنابالجبر میں اس پہلو کے حوالے سے قانون سازی کا نتیجہ یہی نکلے گا کہ زنا کی سزا عورت کے رحم وکرم پر ہوجائے گی۔زنا كے معاملہ ميں اس شدت كے ساتھ گواہى كى تخصيص ميں عزت و ناموس كى بھی حفاظت ميں احتياط ہے، تا كہ لوگ طعن اور تہمت لگانا آسان نہ سمجھيں۔.
امام مارودى رحمہ اللہ لکھتے ہيں:
” جس معاملے كى گواہى دى جارہى ہے اس كے سخت ہونے اور شديد ہونے كے اعتبار سے گواہى بھى شديد ہو گى، جب زنا اور لواطت و بدكارى سب سے برے اور فحش كام ميں شامل ہوتى ہے جس سے منع كيا گيا ہے تو اس كے آخر ميں گواہى بھى اتنى ہى شديد ركھى گئى، تا كہ حرمت كى بےپردگى نہ ہو، اور اسے ختم كرنے كا باعث بنے ” انتہى.
ديكھيں: الحاوى ( 13 / 226 ).
یہ اتنی سخت شرط رکھنے کی وجہ تھی کہ کوئی کسی کی عزت مجروع نا کرسکے اور نا اتنی سخت سزا کسی ایسے کو دی جاسکے جس نے جرم کیا ہی نا ہو، اس معاملے میں سیکولر عناصر یہ منافقت کرتے ہیں کہ اک طرف وہ اس گواہی کی سخت شرط پر شور مچاتے ہیں اور دوسری طرف زنا کے جرم میں سنگساری اور کوڑوں کی سزا کو غیر انسانی بھی کہتے ہیں۔ یعنی نہ اُدھر خوش نہ ادھر!!

شبہات کا ازالہ

1. اسلامی نظریاتی کونسل کی رائے :
” زنا بالجبر کے مقدمات میں صرف ڈی این اے ٹیسٹ ہی کی بناء پر حد (یعنی سنگساری کی سزا ) نافذ نہیں کی جا سکتی اسے صرف ضمنی شہادت کے طور پر قبول کیا جائے”
اسکی وجہ یہ ہے کہ ڈی این اے کی شہادت شناخت تو کرسکتی ہے لیکن یہ زنا بالرضا اور زنا بالجبر میں تفریق کرنے میں معاون نہیں ہے۔ اس سلسلے میں دیگر شہادتیں بھی درکار ہوتی ہیں۔۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ یہی قانون دیگر کئی جرائم کے فیصلے میں پٌہلے سے موجود ہے مثلاً قتل کے کسی کیس میں فنگر پرنٹس یا پوسٹ مارٹم رپورٹ سے مدد لی جاتی ہے۔ وجہ اس کی یہ ہے کہ ان میڈیکل شہادتوں سے کسی مخصوص فعل کا وقوع تو ثابت ہوسکتا ہے لیکن اس کی حتمی نوعیت ، جیتے جاگتے انسانوں کی گواہی کے بغیر ممکن نہیں۔یہی صورتحال ڈی این اے کے بارے میں بھی ہے۔ ڈی این اے کو نظریاتی کونسل نے ضمنی شہادت قرار دیا ہے اس طرح اُنہوں نے اوقوعہ کے ثبوت میں اسے تائیدا ًقبول کرنے کی بات کی ہے۔ ڈی این اے سے فعل زنا کا ثبوت مل سکتا ہے ، اس سے یہ پتہ نہیں چلتا ہے کہ یہ فعل رضا مندی سے ہوا یا جبر واکراہ اور ظلم کی بنا پر ۔ اس سے جتنا فائدہ لیا جاسکتا تھا اتنا لینے کی بات کی ، یہ بات معقو ل اور واضح سمجھ آنے والی تھی لیکن پھر بھی حسن نثار، یاسر پیرزادہ اور بی بی سی کے محمد حنیف جیسے کالم نگاروں نے عوام کو گمراہ کرنے کے لیے طوفان اٹھائے رکھا۔

جنگ کے کالم نگار یاسر پیرزادہ ‘اسلامی نظریاتی کونسل کا اسلامی نظام’کے زیر عنوان رقم طراز ہیں:

”اسلامی نظریاتی کونسل نے اپنے حالیہ اجلاس میں یہ ‘فتوٰی’ صادر کیا ہے کہ اجتماعی عصمت دری کے مقدمات میں ڈی این اے ٹیسٹ کو بنیادی شہادت کے طور پر قبول نہیں کیا جائے گا۔ یہ خبر ریپ ملزمان کے لئے تازہ ہواکا جھونکا ثابت ہوسکتی ہے لہٰذا ایسے تمام ملزمان کو چاہئے کہ وہ کونسل کے چیئرمین کو شکریے کی اِی میل ارسال کریں اور جیل سے چھوٹنے کے فوراً بعد اُن کے ہاتھ پر بیعت کرلیں۔…
اس فیصلے کے دور رَس اثرات ابھی سے سامنے آنا شروع ہوگئے ہیں… کراچی کی ایک عدالت نے اس نظام پر عمل درآمد کا آغاز کردیا ہے۔ان غلط فیصلوں کے نتیجے میں گینگ ریپ ہونے والی خواتین کی آواز دب جائے گی اور ملزم دندناتے پھریں گے۔ کیا اسلامی نظریاتی کونسل کا یہی انصاف ہے؟’
(روزنامہ جنگ لاہور،3جون 2013ء)

‘شرعی ڈین اے’ کے نام سے لکھے جانے والی رپورٹ میں محمد حنیف لکھتے ہیں کہ

”کونسل میں شامل تمام اراکین اعلیٰ تعلیم یافتہ ہیں، اِس ملک کے معروضی حالات سے واقف ہیں، اُمید ہے فقہ اور حدیث کے ساتھ ساتھ ہائی سکول کی سائنس بھی پڑھی ہو گی۔یہ بھی جانتے ہوں گے کہ آپ شاختی کارڈ جعلی بنوا سکتے ہیں، کسی اور کے پاسپورٹ پر اپنی تصویر لگا سکتے ہیں، پلاسٹک سرجری سے چہرہ بھی تھوڑا بہت بدل سکتے ہیں، لیکن ابھی تک دریافت ہونے والے انسانی جینیاتی شناخت میں ڈی اے این ہی وہ کوڈ ہے جو کسی دو اِنسانوں میں مشترک نہیں ہوتا۔لیکن اسلامی نظریاتی کونسل والے بھی کیا کریں وُہ مذہبی بھی ہیں اور نظریاتی بھی اور ہر ایسی سائنسی ایجاد جو اُن کے رُتبے کو چیلنج کرے، اُن کے لیے قابل قبول نہیں ہے… ڈی این اے ٹیسٹ جس کے ذریعے ‘ریپ’ جیسے قبیح جرم کا شکار ہونے والی ایک بچی کو انصاف مل سکتا ہے، ہمارے ملک کے چنیدہ علما اس پر متفق ہیں کہ نہیں ہونے دیں گے۔”(بی بی سی اردو ویب سائٹ:30 مئی 2013ء)

خبر کا انداز اور لہجہ، رپورٹ اورحقیقت سے بڑھ کر طنز وتمسخر کی بھونڈی مثال ہے، بی بی سی کی سابقہ روایات کے عین مطابق، خبر سے زیادہ اس میں اپنے قاری کی ذہن سازی کی کوشش کی گئی ہے۔ حیرانی اس امر پر ہے کہ کسی نے بھی خبر کی حقیقت کو سمجھنے یا اسےبیان کرنے کی لمحہ بھر کوشش نہ کی اور لگے علما کے بہانے سے اسلام کو کوسنے…!!

2. سیکولر عناصر یہ پراپیگنڈہ بھی کرتے ہیں کہ عورت اگر چار گواہ نا لاسکے تو ملزم کو کوئی سزا نہیں دی جاسکتی ۔ یاسر پیرزادہ کے کالم سے پیش کیے گئے اقتباس میں بھی یہی بات موجود ہے۔
یہ بات بالکل خلاف حقیقت بات ہے ۔ اگر گواہوں کی شرط پوری نا ہوسکے تو اس صورت میں مجرم کو آزاد نہیں چھوڑ دیا جاتا بلکہ اسے تعزیری سزا دی جاتی ہے ۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ یہ تعزیری سزا بھی اس سزا سے سخت ہے جتنی یہ زانی کو دینے کا مطالبہ کرتے ہیں ۔ حدود آرڈیننس سیکشن ۱۰ کے تحت اگرکوئی عورت ریپ کا الزام لگائےاور چار گواہ نہیں لاسکے، لیکن اس جرم کو ثابت کرنے کے لئے سائنسی، میڈیکل اور واقعاتی شہادتیں موجود ہوں تو مجرم کو تعزیری سزا دی جاسکتی ہے جو کہ زیادہ سے زیادہ پچیس سال تک ہوسکتی ہے۔

فیس بک تبصرے

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *