سیکولری لاجک-اگر وہ بھی ایسا کرلیں۔۔

10993400_1601163470120279_6506562093190453914_n

ایک استدلال یہ بھی وضع کیا جاتا ھے کہ”اگر ہندوستان بھی اپنے ملک کو ہندو سٹیٹ ڈیکلیر کردے یا امریکہ عیسائی سٹیٹ ڈیکلیئر کردے تو آپ مسلمانوں کو کیسا لگے گا؟ تو اگر آپ ان سے انکے ملکوں میں برابری کے حقوق طلب کرتے ہیں تو اپنے ملک میں یہ حقوق کیوں نہیں دیتے؟’
“ریسیپروسیٹی” (Reciprocity) کی عقلیت پر مبنی یہ نہایت عجیب و غریب استدلال ہے۔ ۔ہم انکے ملک میں رہنے والے مسلمانوں کے لئے سیکولرازم کی بنیاد پر حقوق اس لئے نہیں مانگتے کہ ہم سیکولرازم کو حق سمجھتے ہیں بلکہ اس لئے مانگتے ہیں کہ وہ “خود اسکا اقرار کرتے ہیں”۔ اگر ہمیں قوت حاصل ہو تو ہم کب اس سیکولرازم کی دہائی دینے والے ہیں؟
پھر یہ بات سمجھ سے بالاتر ہے کہ جو لوگ “خود” سیکولرازم کو پروموٹ کرتے ہیں ہم انکے منہ میں یہ بات کیوں ڈال کر استدلال وضع کرنے کی کوشش کرتے ہیں کہ “اگر وہ یوں کرلیں یا ووں کرلیں تو؟”
بھائی ہم تو ان سے انکی پوزیشن پر بات کریں گے، نہ کہ کسی مفروضہ پوزیشن پر۔۔۔۔جب وہ ایسا کریں گے تو اس وقت “بطور حکمت عملی” ہمیں حسب استطاعت کیا کرنا ہے ہم دیکھ لیں گے۔
مگر اس بنا پر ہم سے یہ مطالبہ ہرگز جائز نہیں کہ ہم بھی اپنے یہاں اسی اصول پرحقوق دینے کے پابند ہونگے۔۔ آخر کیوں فرض کیا جائے کہ ایک ہی اصول ہر جگہ لاگو ہونا چاہئے؟ دیکھئے جب آپ امریکہ جاتے ہیں تو امریکی آپ کو “زنا کا حق” دیتے ہیں، تو کیا اسکا مطلب یہ ہے کہ جب امریکی ہمارے یہاں آئے تو ہم بھی اسے یہ حق عطا کریں؟
پھر اس استدلال کی نوعیت سے معلوم ہورہا ہے کہ آپ اسلام کو معاملے میں “ایک فریق” بنا کر خود اس سے “باہر کھڑے” ہوکر گویا فریقین کے درمیان منصفی کرانا چاہتے ہیں۔ یہ عین سیکولرانہ طرز استدلال ہے، پھر آپ کہتے ہیں کہ
“ہمیں سیکولر مت کہو۔”

 

فیس بک تبصرے

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *