پاکستان کی ترقی میں رکاوٹ ۔ ۔

10703929_1546125952290698_7782030804783370552_n

دیسی سیکولر اور لبرل مذہب اور مذہب پسندوں کو ترقی کا دشمن سمجھتے ہیں اور جگہ جگہ اس پر لکھتے اور تقریریں کرتے نظر آتے ہیں ۔ حالانکہ حقیقت یہ ہے کہ پاکستان کی ترقی میں سب سے بڑی رکاوٹ یہ خود ہیں۔ ۔کوئی ان سے پوچھے کہ یونیورسٹیز کالجز اور دوسرے سارے سائنسی ادارے مولوی نہیں بلکہ تمہارے حوالے کیے ہوئے ہیں، اگر پاکستان میں ان اداروں سے فائدہ نہیں ہورہا تو اسکا ذمہ دار مولوی کیسے ہے؟
دوسری طرف عملی میدان میں بھی انکا کردار یہ ہے کہ یہ پاکستان کے دفاعی منصوبوں کے سب سے بڑے نقاد اور غیروں کے اشارے پر ترقی کے چلتے منصوبے بھی رکوانے کی کوشش کرتے رہتے ہیں۔ پرسوں کی اخباری رپورٹ ہے کہ کینپ 2، 3 اور 4 نامی نیوکلیائی بجلی کے منصوبوں پر کام کو سندھ ہائی کورٹ نے ڈاکٹر پرویز ہود بھائی اور شرمین عبید چنائے کی درخواست پر روک دیا ہے۔
مجوزہ منصوبے کا ہر یونٹ 1100 میگا واٹ بجلی پیدا کریگا۔ درخواست گذاروں کا موقف ہے کہ “اے پی-1000” نیوکلر ری ایکٹر دنیا میں کہیں استعمال نہیں ہوا لہذا تجربے کرنے سے باز رہا جائے جبکہ حقیت یہ ہے کہ چین میں اس قسم کے چار ری ایکٹر تکمیل کے مراحل میں ہیں اور خود امریکہ کے “نیوکلر ریگولیٹری کمیشن” نے 2012ء میں اس قسم کے دو ری ایکٹرز کے تعمیر کی منظوری دی تھی اور آج کل چار ری ایکٹرز پر کام جاری ہے۔ ساتھ ہی بلغاریہ اور برطانیہ بھی “اے پی-1000” کے منصوبے پر کام کررہے ہیں۔
ہود بھائی تو کسی تعارف کے محتاج نہیں۔ موصوف ملائیت دشمنی میں پی ایچ ڈی کرکے ڈاکٹر بنے، اٹھتے بیٹھے اپنی نا اہلی کی ذمہ داری مُلا پر ڈالتے اور ہر وقت اسلام پسندوں کو مطعون کرتے نظر آتے ہیں ۔ یہاں سوال یہ کیا جاسکتا ہے کہ کیا کینپ کے مجوزہ منصوبوں کا آغاز بھی کسی مُلّا نے کیا ہے جو ہود بھائی اسے روکنے کے لیے تاؤلے ہوئے جارہے؟ اور ایسڈ فیم آسکر ونر شرمین صاحبہ کو کون نہیں جانتا؟ حیرت یہ ہے کہ یہ محترمہ بھی اس مسئلے میں کود پڑی ہیں، امید ہے مستقبل میں ملالہ سمیت مغرب کے دوسرے سارے وظیفہ خوار بھی پاکستان کی اس ‘ ترقی’ میں اپنا کردار ادا کرتے نظر آئیں گے۔۔
ہم بے بس بے کس ، اپنے خون سے نچوڑے ٹیکسوں سے انہیں پچھلے پینسٹھ چیاسٹھ سالوں سے پال رہے ہیں جو اپنی جگہ ایک المیہ ہے مگر اصل المیہ وہ ہے کہ ہود بھائی جیسے متواتر پڑھے لکھے پاکستانی ٹیلنٹ کو احساس کمتری کا سبق دے رہے ہیں ۔!!
یہ بات واضح ہے کہ ہود و شرمین وغیرہ نے عدالت کو اس معاملے میں اہل کراچی یا پاکستان کی محبت میں نہیں گھسیٹا۔ بلکہ پاکستان مخالف طاقتوں کی آشیر باد سے یہ مسئلہ الجھایا ہے۔ ہمارے یہ نام نہاد ترقی پسند اور ‘عظیم سائنسدان’ ایک سائنسی پروجیکٹ کو رکوانے کی کوششوں میں لگے ہوئے دوسری طرف ہمارا پڑوسی ملک مریخ تک جاپہنچا ہے ۔

فیس بک تبصرے

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *